Mufti Muneeb-ur-Rehman Today's Columns

حیوانات کے ساتھ حسنِ سلوک… (1) از مفتی منیب الرحمٰن ( زاویہ نظر )

Mufti Muneeb-ur-Rehman

زمین پر حیوانات کا وجود انسانیت کے لیے اللہ تعالیٰ کی ایک عظیم نعمت ہے۔ یہ بندوں پر اس کا بڑا فضل ہے کہ اُس نے چھوٹے بڑے ہر جانور کو اُن کے تابع کر دیا ہے۔ حیوانات کے ساتھ انسانوں کی بہت سی ضروریات وابستہ ہیں، ان کی اہمیت و ضرورت کو بیان کرتے ہوئے اللہ تعالیٰ نے فرمایا: ”اور اس نے تمہارے لیے جانور پیدا کیے، ان میں تمہارے لیے گرم لباس اور بہت سے فائدے ہیں اور ان میں سے بعض کو تم (بطورِ غذا) کھاتے ہو اور تمہارے لیے ان میں زینت ہے، جب تم انہیں شام کو واپس لاتے ہو اور جب چرنے کے لیے چھوڑتے ہو اور وہ چوپائے تمہارے بوجھ اٹھا کر ایسے شہر تک لے جاتے ہیں جہاں تم اپنی جان کو مشقت میں ڈالے بغیر نہیں پہنچ سکتے۔ بیشک تمہارا رب نہایت مہربان‘ رحم والا ہے اور (اس نے) گھوڑے اور خچر اور گدھے (پیدا کیے) تاکہ تم ان پر سوار ہو اور یہ تمہارے لیے زینت ہے اور (ابھی مزید) ایسی چیزیں پیدا کرے گا جو تم جانتے نہیں‘‘۔ (النحل: 5 تا 8) حیوانات کی اہمیت کا اندازہ اس سے لگایا جا سکتا ہے کہ قرآن کریم میں تقریباً تیس سے زائد حیوانات کا تذکرہ موجود ہے اور صرف اتنا ہی نہیں، بلکہ پانچ سورتیں خاص حیوانات کے نام سے موسوم ہیں: سورۂ بقرہ (گائے)، سورۂ نحل (شہد کی مکھی)، سورۂ نمل (چیونٹی)، سورۂ عنکبوت (مکڑی)، سورۂ فیل(ہاتھی)، اس کے علاوہ تقریباً دو سو آیات میں حیوانات کا تذکرہ موجود ہے۔
اسلام سلامتی کا مذہب ہے اور سلامتی کی یہ نوید صرف انسانوں کے لیے نہیں بلکہ جانوروں اوردرختوں کے لیے بھی ہے۔ دینِ اسلام نے انسانوں کی طرح حیوانات کے حقوق بھی معین کیے ہیں، ان کے ساتھ حسنِ سلوک کا حکم دیا ہے اور بلاوجہ اُنہیں اذیت و تکلیف میں مبتلا کرنے سے سختی سے منع فرمایا ہے۔ حیوانات کے ساتھ نیکی کرنے کی اہمیت کا اندازہ حسبِ ذیل احادیث سے لگایا جا سکتا ہے:
حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں: رسول اللہﷺ نے فرمایا: ”ایک بدکار عورت کا گزر ایسے کنویں پر ہوا جس کے قریب ایک کتا کھڑا پیاس کی شدت سے ہانپ رہا تھا اور قریب تھا کہ وہ پیاس کی شدت سے ہلاک ہو جائے، کنویں سے پانی نکالنے کو ڈول وغیرہ کچھ نہیں تھا، اس عورت نے اپنا چرمی موزہ نکال کر اپنی اُوڑھنی سے باندھا اور پانی نکال کر اس کتے کو پلایا، اس عورت کا یہ فعل بارگاہ الٰہی میں مقبول ہوا اور اس کی بخشش کر دی گئی‘‘۔ (مسلم: 2245)۔ اندازہ لگائیں کہ بدکاری کتنا سنگین اور بڑا گناہ ہے، خصوصاً جب عادت اور پیشے کے طور پر ہو، لیکن اتنے بڑے گناہ کو اللہ تعالیٰ نے فقط ایک جانور کے ساتھ نیکی کرنے کی وجہ سے معاف فرما دیا اور نیکی بھی اس جانور کے ساتھ کہ جسے بعض اہلِ علم نے نجس العین قرار دیا ہے اور نبی کریمﷺ نے اس کے جوٹھے برتن کو تین یا سات مرتبہ دھونے کا حکم دیا ہے۔
اسی مفہوم کی ایک اور حدیث میں فرمایا: ” ایک شخص کہیں جا رہا تھا، را ستے میں اُسے سخت پیاس لگی تو وہ ایک کنویں میں اُترا اور اس سے پانی پیا، جب وہ باہر نکلا تو دیکھا کہ ایک کتا پیاس کی وجہ سے ہانپتے ہوئے گیلی مٹی چاٹ رہا ہے، اس شخص نے دل میں سوچا : (تھوڑی دیر پہلے) جس طرح پیاس کی شدت مجھے اذیت پہنچا رہی تھی، یہ کتا بھی اِسی طرح اذیت و تکلیف کا شکار ہے، پس (وہ کنویں میں اترا) اس نے اپنا موزہ پانی سے بھرا اور اسے منہ میں لے کر باہر آیا اور کتے کو پانی پلایا، اللہ تعالیٰ نے اس کی اس نیکی کی قدردانی فرماتے ہوئے اس کی بخشش فرما دی۔ صحابہ کرام نے عرض کی: یا رسول اللہﷺ! کیا ہمیں چوپایوں کی خدمت کرنے میں بھی اجر ملے گا؟ آپﷺ نے فرمایا: ہر ذی حیات (جاندارکو نفع پہنچانے) میں اجر و ثواب ہے‘‘ (بخاری: 2363)۔ ایک شخص نے نبی کریمﷺ سے عرض کی: یا رسول اللہﷺ! میں اپنے اُونٹوں کو پانی پلانے کے لیے اپنے حوض میں پانی بھرتا ہوں، کسی دوسرے شخص کا اُونٹ آ کر اس میں سے پانی پیتا ہے توکیا مجھے اس کا اجر ملے گا؟ رسول اللہﷺ نے فرمایا:ہر ذی حیات (کو نفع پہنچانے) میں اجر و ثواب ہے‘‘ (مسند احمد: 7075)۔
اسلام نے ایک طرف حیوانات کے ساتھ حسنِ سلوک کو اجر و ثواب کا ذریعہ قرار دیا ہے تو دوسری طرف ان کے ساتھ بدسلوکی کرنے اور اُنہیں اذیت و تکلیف میں مبتلا کرنے کو گناہ اور عذاب و عقاب کی وجہ قرار دیا ہے۔ حدیث پاک میں ہے: ”نبی کریمﷺ نے فرمایا: ایک عورت کو ایک بلی کی وجہ سے عذاب میں مبتلا کیا گیا، اس نے ایک بلی کو پکڑ کر قید کر لیا تھا، یہاں تک کہ وہ بھوک سے مرگئی، یہ عورت نہ توخود اُسے کھانے کو کچھ دیتی تھی اور نہ اُسے چھوڑتی تھی کہ حشرات الارض سے اپنی غذا حاصل کر لیتی‘‘۔ (بخاری: 3318)
حیوانات کو بلاوجہ جسمانی اذیت و تکلیف میں مبتلا کرنے کی ممانعت ایک طرف‘ نبی کریمﷺ نے تو حیوانات کو سَبّ وشتم کرنے اور اُن پر لعنت کرنے سے بھی منع فرمایا ہے۔ حدیث پاک میں ہے: ”نبی کریمﷺ ایک سفر میں تھے، پس آپﷺ نے کسی پر لعنت بھیجنے کی آواز سنی، پوچھا: کیا معاملہ ہے؟ صحابہ نے عرض کی: فلاں عورت ہے، جس نے اپنی سواری کے جانور پر لعنت کی ہے۔ یہ سن کر نبی کریمﷺ نے فرمایا: اس جانور سے کجاوہ اور سامان اُتار دو، بلاشبہ یہ اب ملعونہ ہے؛ چنانچہ صحابہ نے اس سے سامان اُتار کر اُسے چھوڑ دیا۔ عمران کہتے ہیں: وہ ایک سیاہی مائل اونٹنی تھی‘‘ ( ابودائود: 2561)۔ حضرت زیدؓ بن خالد بیان کرتے ہیں: ”ایک شخص نے مرغے کی اونچی آواز پر اُسے لعنت کی، آپﷺنے فرمایا: اِس پر لعنت مت کرو، یہ تمہیں نماز کے لیے بیدار کرتا ہے‘‘ (مسند احمد: 17034)۔
لعن کے لغوی معنی ہیں: ”ہانکنا، محروم کرنا اور ذلیل کرنا‘‘، جب لعنت کی نسبت اللہ تعالیٰ کی طرف ہو تو اس کا مطلب یہ ہوتا ہے: اللہ تعالیٰ کا اپنے قرب اور اپنی رحمت سے محروم کردینا اور جب اس لفظ کی نسبت بندے کی طرف ہو تو اس سے مراد ہوتا ہے: ”رحمت الٰہی سے دوری و محرومی کی بددعا کرنا‘‘۔ کسی ایسے شخص پر لعنت کرنا جو لعنت کا مستحق نہ ہو‘ سخت گناہ ہے اور بار بار لعنت کرنا تو گناہ کبیرہ ہے۔ اہلِ علم و فقہائے کرام فرماتے ہیں: کسی معین شخص پر لعنت کرنا حرام ہے؛ اگرچہ وہ کافر ہی کیوں نہ ہو۔ ہاں! اگر کسی شخص کے بارے میں یقینی طور پر معلوم ہو کہ وہ کفر ہی کی حالت میں مر گیا ہے جیسے ابوجہل وغیرہ تو اس پر لعنت کرنا حرام نہیں ہے۔ اسی طرح کسی برائی میں مبتلا لوگوں پر عمومی انداز میں لعنت کرنا جیسے یہ کہنا :” کافر یا ظالم یا قاتل یا زانی یا سود خور اور جھوٹے پر اللہ کی لعنت ہو‘‘، یہ حرام نہیں ہے، نبی کریمﷺ نے فرمایا: ”مومن طعنہ دینے والا، لعنت کرنے والا، بے حیا اور بدزبان نہیں ہوتا‘‘ (ترمذی: 1977)۔ انسان اور حیوانات تو رہے اپنی جگہ‘ نبی کریمﷺ نے جمادات اور غیر جاندار چیزوں پر بھی لعنت کرنے سے منع فرمایا ہے۔ حضرت عبداللہؓ بن عباس بیان کرتے ہیں: ”ایک شخص نے آندھی پر لعنت کی تو نبی کریمﷺنے فرمایا: آندھی پر لعنت نہ بھیجو، کیونکہ وہ تو (اللہ کے) حکم کی پابند ہے اور جس شخص نے کسی ایسی چیز پر لعنت بھیجی جو لعنت کی مستحق نہیں ہے تو لعنت اسی پر لوٹ آتی ہے‘‘ (ترمذی: 1978)۔
کئی لوگ بے زبان جانوروں پر اُن کی طاقت سے زیادہ بوجھ لاد دیتے ہیں، جس کی وجہ سے اُنہیں چلنے میں شدید دشواری اور تکلیف کا سامنا کرنا پڑتا ہے بلکہ زیادہ وزن رکھنے سے اُن کی کمر زخموں سے چور ہو جاتی ہے۔ سنگدلی اور ستم ظریفی کی انتہا یہ ہوتی ہے کہ اُنہیں تیز چلانے اوردوڑانے کے لیے اُن پر ڈنڈے برسائے جاتے ہیں۔ اِس میں کوئی شک نہیں ہے کہ بعض جانور وں کو اللہ تعالیٰ نے نقل و حمل یعنی بوجھ اٹھانے کا ذریعہ بنایا ہے، لیکن اس کا مطلب یہ نہیں ہے کہ ان پر ان کی طاقت سے زیادہ بوجھ لاد دیا جائے۔ نبی کریمﷺ نے اس سے سختی کے ساتھ منع فرمایا ہے۔ آپﷺ نے ایک جانور پر تین آدمیوں کو سوار ہونے سے منع فرمایا ہے۔ ( مسلم: 2427) امام شعبی نے تین لوگوں کو ایک خچر پر سوار دیکھا تو فرمایا: ” تم میں سے ایک شخص اُتر جائے، کیونکہ رسول اللہﷺ نے تیسرے شخص پر لعنت فرمائی ہے۔ (مصنف ابن ابی شبیہ: 26376)۔ حضرت سہلؓ بن حنظلہ بیان کرتے ہیں: ”رسول کریمﷺ ایک اونٹ کے قریب سے گزرے تو دیکھا کہ بھوک و پیاس کی شدت اور سواری وبار برداری کی زیادتی سے اس کی پُشت اس کے پیٹ سے لگ گئی تھی، نبی کریمﷺ نے فرمایا: ان بے زبان چوپایوں کے بارے میں اللہ تعالیٰ سے ڈرو، ان پر ایسی حالت میں سواری کرو جب وہ طاقتورہوں اور سواری کے قابل ہوں اور اُنہیں اچھا کھلائو‘‘ (ابودائود: 2548)۔
حضرت ابوہریرہؓ بیان کرتے ہیں: ”ایک دن نبی کریمﷺ کسی انصاری کے باغ میں داخل ہوئے، اچانک ایک اُونٹ آیا اور آپﷺ کے قدموں میں لوٹنے لگا، اس وقت اُس کی آنکھوں میں آنسو تھے۔ نبی کریمﷺ نے اس کی کمر اور سر کے پچھلے حصے پر ہاتھ پھیرا، جس سے وہ پُرسکون ہو گیا۔ پھر نبیﷺنے فرمایا: اس اُونٹ کا مالک کون ہے؟ تو وہ دوڑتا ہوا آیا، آپﷺ نے اس سے فرمایا: اس کو اللہ تعالیٰ نے تمہاری ملکیت میں دیا ہے، اللہ سے ڈرتے نہیں؟ یہ مجھ سے شکایت کر رہا ہے کہ تم اِسے بھوکا رکھتے ہو اور اس سے محنت و مشقت کا کام زیادہ لیتے ہو‘‘ (ابودائود: 2549)۔
آپﷺ نے طویل سفر کے دوران جانوروں کو آرام دینے اور اُنہیں چرنے پھرنے کی تلقین کرتے ہوئے فرمایا: ”جب تم سبزہ والی زمین میں سفر کرو تو اونٹوں کو ان کا حصہ دو‘‘ (مسلم: 1926)، یعنی سفر کے دوران اگر ہریالی نظر آئے تو ان کو کچھ دیر کے لیے چرنے اور آرام کا موقع دو، بھوکا اور پیاسا مسلسل چلا کر ان کو نہ تھکائو، بلکہ جس جانور کی خلقت سواری اور بار برداری کے لیے نہیں ہوئی جیسے گائے اور بھینس وغیرہ تو ان پر سواری کرنا اور بوجھ لادنا جائز نہیں۔ رسول اللہﷺ نے فرمایا: ”ایک آدمی بیل پر بوجھ ڈالے ہوئے اُسے ہانک رہا تھا کہ اس بیل نے اس آدمی کی طرف دیکھ کر کہا: میں اس کام کے لیے پیدا نہیں کیا گیا ہوں، بلکہ مجھے تو کھیتی باڑی کے لیے پیدا کیا گیا ہے، لوگوں نے حیران ہوکر کہا: سبحان اللہ!کیا بیل بھی بولتا ہے؟ تو رسول اللہﷺ نے فرمایا: میں تو اس بات پر یقین کرتا ہوں اور ابوبکرؓ اور عمرؓ بھی یقین کرتے ہیں۔ (مسلم: 2388)، اس حدیث سے یہ بات معلوم ہوتی ہے کہ جانوروں پر ان کی طاقت سے زیادہ بوجھ لادنا اور جس مقصد کے لیے ان کی تخلیق ہوئی ہے، اس کے علاوہ دیگر کاموں میں اُنہیں استعمال نہیں کرنا چاہیے۔ (جاری)

About the author

Mufti Muneeb-ur-Rehman

Mufti Muneeb-ur-Rehman

Leave a Comment

%d bloggers like this: