Ali Jaan Today's Columns

رمضان کی آمداورمہنگائی، خان کومہنگائی لے ڈوبے گی از علی جان ( مستقبل جاں )

Ali Jaan
Written by Ali Jaan

ایک ہوٹل پربیٹھے تھے کہ کچھ لوگوں میں بحث وہونے لگی کہ ہمارے حکمران کرپٹ ہیں تو کسی نے کہا کہ جو پہلے حکومت چلا رہے تھے کون سا دودھ کے دھلے تھے وہ اپنی باتوں میں لگے رہے میرا دھیان اس آدمی کی بات پرگیا کہ ہمارے حکمران کرپٹ ہیں ۔حضرت عمرفاروق ؓ کا قول ہے جیسی عوام ویسے حکمران اب میں یہ سوچ رہا ہوں کہہ ہمارے حکمران توکرپٹ ہیں توہم کون سا دودھ کے دھلے ہیں اگرحکمران چورہیں توکیا ہم سادھ ہیں کیونکہ ہمیں بھی جہاں موقع ملتا ہے ہم دھوکہ دینے سے پیچھے نہیں ہٹتے جہاں بھی دائولگتاہے اپناالوسیدھاکرلیتے ہیں عام آدمی سے لیکرپولیس افسرتک وکیل سے لیکرمزدورتک اگرہم کسی جگہ جاب کرتے ہیں تومالک کے سامنے ہم ایسے کام کرتے ہیں جیسے ہمیں تھوڑی سی بھی ویل نہیں اتنا خودکو مصروف دکھاتے ہیں مگرجیسے BOSSنے پیٹھ کی ہم گپوں میں لگ گئے یا موبائل میں کھوگئے یہ بے ایمانی نہیں توکیا کہ یہ دھوکہ نہیں توکیا کیونکہ ہم جہاں نوکری کرتے ہیں وہ ہمیں ہمارے ٹائم کے پیسے دیتا ہے تو جتنی دیراس کے پاس ہیں اسی کا کام کرنا چاہیے ناکہ کام چوری اگربات کریں سیاستدانوں کی تو وہ بھی توہم میں سے ہیں نہ کہ فرشتے اور25جولائی 2018کا دن کوئی بھول ہی نہیںسکتا کیوںکہ ہرایک شخص کی زبان پر تبدیلی کے نعرے تھے ٹی وی چینل لگائیں تو تبدیلی کی باتیں سوشل میڈیا آن کریں تو تبدیلی کی پوسٹیں سیاستدان کیا عام عوام بھی ایک دوسرے کو مبارکباد دیتے دکھائی دیئے مگرانہیں پتا نہ تھا یہ تبدیلی چند دن کی ہے کیونکہ ساری نئی حکومت ہے کسی کو کوئی تجربہ تک نہیں جس وجہ سے کوئی بھی بل ان کے پاس جائے بنا سوچے اس پر سگنیچرکردیتے ہیںاس وجہ سے مہنگائی تلے عوام دبتی جارہی ہے۔مگراس تبدیلی نے یہاں تک بریک نہیں لگائی بلکہ رمضان المبارک کا سنا تو سبزی منڈی سے ہوکے دودھ دہی والے دکان سے چکرلگا آٹاگھی،چینی،دال،مرچ وغیرہ سے ہوتی ہوئی پھل فروٹ والے سے ملاقات کرکے کپڑے جوتے والے سے ہوکے پتا نہیں کہاں کہاں چکرلگائے جس کی وجہ سے ہرچیزمہنگی ہوگئی ۔سب سے زیادہ برائلرنے نراش کیابرائلرمرغی نے 370سے400تک اپنی سیٹنگ کرلی اور دیسی مرغی نے 750میں اڑان بھرلی چھوٹا گوشت1450سے 1600روپے پائے کی بات کریں تو 800کا ایک اوربکرے کے پائے کی بات کریں تو 1200کے چار۔رمضان المبارک میں لیموں سب سے زیادہ استعمال ہونے والی شئے ہے جس کے منہ مانگے دام لے رہے ہیں ایسے لگتا ہے لیموں نہ ہواکوئی انمول چیزہوگئی جس کو 400 سے500روپے کلو فروخت کررہے ہیں دودھ100روپے اور دہی120روپے ملنے لگی کوئی بات کرنے پر دکاندار دھتکاردیتے ہیں جیسے ہم دودھ دہی نہیں ووٹ لینے آئے ہوںسیب 150سے اوپرخربوزہ بھی سنچری کرنے میں کامیاب ہوگیاکیلاکی توبات ہی نہ پوچھیں جس نے 150سے نیچے آنے کا نام نہیں لے رہاامرود125تک بکنے لگا گرما100سے 150روپے یہ توعام نرخ ہیں مگرکئی جگہوں پر اس سے بھی زائدپیسے وصول کیے جاتے ہیں چیکو نے بھی رمضان کا سن کر 250تک بریک دبا رکھی ہے لگاٹھ نے بھی 150سے 200اورسٹابری نے بھی رمضان میں ریلیف دے کر50روپے سے 120تک پھلانگنے میں کامیاب ہورہی ہے سبزی کی بات کریں تو عورتیں سرخ مرچ کی طرح لال ہوجاتی ہیں اس وجہ سے بھئی ہم مردوں کی بھلائی اسی میں ہے سبزی کی بات گھر میں کریں ہی نہ کیوں کہ نئی حکومت کا غصہ ہم پر نکل جائے گا اور بیگم کا بیلن اور ہم ۔۔۔۔۔نابابا ہمیں توڈرلگتاہے۔بھنڈی 150کریلے 200پالک 50روپے فی ,کلوگھیاکدو120,،گھیا توری 80سے 100روپے ،بینگن 90سے 110روپے ،ادرک 150سے 200روپے چائینہ ادرک 185سے 200روپے شملہ مرچ200روپے کلو لہسن140روپے پیاز 40روپے کلو , لال مرچ500روپے دال چنا180باریک190روپے مونگ دال موٹی 220باریک 155روپے مسور دال باریک210موٹی150روپے چاول باسمتی130پرانہ155اوپرپھلانگ گیاٹماٹر50ہواتوسبزمرچ50سے80روپے کوپہنچ گئی اب غریب آدمی کے چوہلے پر بھی ڈاکہ یعنی 1700روپے سے 1800تک20کلو آٹا پہنچ چکا ہے ۔ حیرانی ہوتی ہے اس کے ساتھ مجھے اکثرعمران خان کی بات یاد آتی ہے کہ’’ میں رولائوں گا‘‘ اس وقت تو ہم کسی پارٹی کا سمجھتے تھے مگراب محسوس ہوتا ہے وہ عوام کورلانے کی بات کرتاتھا ہم ایسے ہی بے وجہ خوش ہوتے تھے۔عالمی بینک نے اپنی علاقائی رپورٹ بعنوان’’ایکسپورٹ وانٹڈ‘‘میں کہا ہے کہ 2019میں پاکستان کی اقتصادی ترقی کی شرح3.4اور220کے مقابلے اب تک مہنگائی کی شرح 133فیصدبڑھ گئی ادارہ شماریات کے مطابق شعبان کے آخری ایام میں مہنگائی کی شرح 18.3فیصدبڑھی اگر2019میں مہنگائی میں 7.1%اضافہ جومالی سال 2020میں 13.5%تک پہنچی ۔ اس سے مراد ہے غریب کو مرنے کیلئے زہرابھی سے خریدلینا چاہیے۔انصاف حکومت میں نااہلوں کے ٹولے نے عوام کا جینا دوبھرکردیا ہے اگرکوئی بات کریں تو کہتے ہیں حکومت کو کچھ وقت دو کیونکہ گزشتہ مالی سال کے دوران پاکستان میں ریکارڈ تجارتی خسارہ ہواجوکہ 31.1ارب ڈالرزتھاجس کی وجہ سے جاری کھاتے کا خسارہ جی ڈی پی کے 6.1فیصدتک پہنچ گیا ہے 2005سے 2018کے درمیان پاکستان کی برآمدی اشیاء 16ارب ڈالرسے بڑھ کر23ارب ڈالرز تک پہنچی یعنی اس میں صرف 47فیصدکا اضافہ ہوااس کے مقابلے میں بنگلا دیش میں یہ اضافہ 286فیصدویتنام میں 563فیصدبھارت میں 193فیصدتک ہوا۔حکومت نے عوام سے پہلے 3ماہ مانگے پھرکہا 8ماہ عوام برداشت کرے پھرکا 24ماہ تولگیں گے اس سے پتہ چلتا ہے یہ حکومت بھی اپناالوسیدھاکررہی ہے اس حکومت نے مہنگائی کے سوا کچھ بھی نہیں دیا تبدیلی کے نعرے دھرے کے دھرے رہ گئے جولوگ پروٹوکول کے خلاف تھے خود پروٹوکول میں لگے ہیں وزیراعظم سے لے کر چھوٹے سے ایم پی اے کو دیکھیں تو پروٹوکول کے بھوکے نظرآتے ہیں صرف باتیں تھیں جوالیکشن سے پہلے ہوئی تھیں ان پرکچھ بھی عمل دکھائی نہیں دے رہا اس کے علاوہ عوام پراربوں روپوں کے نئے ٹیکس لگایئے گئے ہیںجن میں سگریٹ،گاڑیوں،موبائل وغیرہ شامل ہیں ۔رپورٹ میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ پاکستان کے صنعتی اورزرعی شعبے کی رفتاربھی آہستہ رہے گی عالمی بینک نے عندیہ دیاکہ اگرپاکستان معاشی اصلاحات کرتاہے تومالی سال 2021میں شرح نمو4%تک پہنچ سکتی ہے ۔مجھے حیرت ہوتی ہے ہمارے ملک میں اتنی زیادہ مہنگائی ہے تھرمیں لوگ بھوک پیاس سے مررہے ہیں 60%سے زائدلوگ آج بھی غربت کی لکیرسے نیچے زندگی بسرکررہے ہیں ہمیں مہنگائی سے ہمیں کوئی گلہ نہیں کیوں کہ یہ توسال میں 365دن ہی آتی جاتی رہتی ہے گلا ہے تواپنے حکمرانوں سے جو ہمیں جھوٹے خواب دکھلاتے ہیں یہ حکمران منہ میں سونے کاچمچہ لے کرپیداہوئے ہیں انہیں ہمارے دکھ درد سے کیا لینا دینا۔میں اپنے حکمرانوں سے ہاتھ جوڑ کرکہناچاہتاہوں اپنے قرضے معاف کروا لو،جتنی گاڑیاں سونے زیوارت گفٹ لینے ہیں لے لو،قومی خزانے کو ویسے بھی تولوٹ کے خالی کررہے ہواس پراورمزیدجتنے چاہوشب روز خون مارلو،ظلم وزیادتی کرلو،جتنے ممالک میں چاہوں اپنے محلات کھڑے کرلو،اقرباء پروری،بدعنوانی،کرپشن کی بدترین مثالیں قائم کرلو،صحت اور تعلیم پر زرابرابربھی ترس نہ کھائو،ملک کاسارابجٹ اپنی عیاشیوں اوراپنی مراعات پر لگالومگرخدارا۔۔ آٹا،گھی،چینی،سبزی،مرچ وغیرہ سستی کردوتاکہ ایک مڈل کلاس فیملی کودووقت کی روٹی توآسانی سے مل سکے اگرعمران حکومت کو کامیاب ہونا ہے توعوام کوریلیف دیں ایسے نہیں کہ عوام کو مزیدٹیکسوں اور قرضوں کے بوجھ تلے دباتے جائوعمران خان کی تقریربھی عوام کی سمجھ میں نہیں آتی مگرجب اپنے کچن کا بجٹ خراب ہوجاتا ہے تب ان کی باتیں سمجھ آنا شروع ہوجاتی ہیںتومحسوس ہوتا ہے تبدیلی آکے چلی گئی ہم جس کاانتظارکررہے تھے ۔ہمارے ملکی معیشت پالیسی سازاگرنیک نیتی اورایمانداری کے ساتھ ایسی اصلاحات پرعمل درآمدکرائیں جس سے ہماراملک آنے والے وقت میں ایکسپورٹ پاورہائوس بن جائے انصاف حکومت نے کوچاہیے کہ جو الیکشن سے پہلے وعدے کئے تھے ان پرعمل شروع کردیں یہ نہ ہو عوام انکو GOODبائے کہہ دیں اور’’گوعمران گو‘‘کے نعرے لگنے شروع ہوجائیں ۔

٭…٭…٭

About the author

Ali Jaan

Ali Jaan

Leave a Comment

%d bloggers like this: