Siraj ul Haq Today's Columns

رمضان قرآن اور ایمان از سراج الحق

Siraj ul Haq
Written by Siraj ul Haq

رمضان المبارک ہماری زندگی میں ایک مرتبہ پھر ہم پر سایہ فگن ہورہاہے۔اللہ تعالیٰ ہمیں توفیق بخشے کہ ہم اس کی رضا کے لیے کامل یکسوئی اور ایمان و احتساب کے ساتھ روزے رکھیں۔ آنحضرتﷺ کا فرمان ہے کہ!ــ’’ ہوشیار اور عقل مند وہ ہے جو اپنے نفس کو قابو میں رکھے اور اپنا ہر عمل آخرت کی نجات و کامیابی کو سامنے رکھتے ہوئے کرے جبکہ وہ نادان اور بے وقوف ہے جو اپنے آپ کو خواہشاتِ نفس کا تابع کردے اور بجائے احکام خداوندی کے اپنے نفس کے تقاضوں پر چلے اور پھر اللہ سے اُمیدیں باندھے۔‘‘ حدیث قدسی ہے نبی مہربانﷺنے فرمایا کہ اللہ تعالیٰ فرماتا ہے ،’’ہلاک ہوگیا وہ شخص جس نے رمضان کو پایا اور اللہ کی عبادت کرکے خود کو جہنم سے آزاد ی کا مستحق نہ بناسکا، ہلاک ہوگیا وہ شخص جس نے اپنے بوڑھے ماں ماپ یا دونوں میں سے کسی ایک کو پایا اور ان کی خدمت کرکے جنت کا مستحق نہ بن سکا ،ہلاک ہوگیا وہ شخص جس نے میرا نام نامی سنا اور مجھ پر درود نہیں بھیجا۔ اس لیے رمضان کی آمد سے قبل ہی ہمیں رمضان المبارک کے رتبہ و مقام پرایک مرتبہ پھرغور کرتے ہوئے ان بابرکت ایام میں خود کو اللہ کی رحمتوں اوربخششوں کا مستحق بنانے کیلئے کمر بستہ ہوجانا چاہئے۔رمضان المبارک سیدالشہور(تمام مہینوں کا سردار مہینہ) ہے۔ اس لیے اس کی شان و شوکت کے مطابق اس کی آمد سے کما حقہ، استفادہ کرنے کے لیے ٹھوس منصوبہ عمل بنانے کی ضرورت ہے۔ حضور ﷺ فرماتے ہیں کہ رمضان کی پہلی رات اللہ تعالیٰ کے حکم سے فرشتے آسمان دنیا پر آتے ہیں اور منادی کرتے ہیں کہ اے اللہ کی رضااور خوشنودی کے طالب ،آگے بڑھ اور اللہ کو راضی کرلے ،اور اے اللہ کے نافرمان ،ماہ مبارک کی عزت و وقار کو دیکھ اور حیا کراور اپنے گناہوں سے باز آجائو۔
آنحضرتﷺکی ایک حدیث سے اشارہ ملتا ہے کہ آپﷺنے پندرہ شعبان کے بعد اہل ایمان کو روزہ رکھنے سے منع فرمایا ہے تاکہ لوگ تازہ دم ہو کر رمضان کے روزے رکھیں، ان میں جسمانی کمزوری لاحق نہ ہو جائے اور آسانی سے تلاوت قرآن اور نوافل وغیرہ کی ادائیگی کرسکیں۔آپﷺنے فرمایا:’’جب آدھا شعبان گزرجائے تو تم نفلی روزے نہ رکھو۔‘‘یہ اس طرف بھی اشارہ ہے کہ پندرہ شعبان سے ہی رمضان کے استقبال کی تیاریاں شروع کردی جائیںتاکہ بروقت ان کوعملی جامہ پہنایا جا سکے۔رمضان المبارک میں ہر کام کاا جروثواب ستر گنا بڑھ جاتا ہے۔ قرآن کے مطالعہ یہ حقیقت آشکار ہوتی ہے کہ اس مہینہ میںقرآن مجید نازل ہوا ہے جس میں مسلمانوں کو مکمل ضابطۂ حیات اور نظامِ زندگی عطا کیا گیا ہے لہٰذا رمضان میں بڑے پیمانہ پر قرآن کی تلاوت ترجمہ و تفہیم اورتراویح میں مکمل قرآن کے سننے کا اہتمام کیا جانا چاہئے۔
روزہ اللہ تعالیٰ کی رضا و خوشنودی حاصل کرنے کا اہم ترین ذریعہ ہے ۔اسی لئے پہلی امتوں پر بھی روزے کسی نہ کسی طریقے سے فرض رہے ہیں جس کے بارے میں خود اللہ تعالیٰ نے قرآن پاک میں فرمایا ہے کہ ’’اے ایمان والو !تم پر روزے فرض کئے گئے ہیں جیسا کہ پہلی امتوںپر فرض کئے گئے تھے تاکہ تم تقویٰ اختیار کرو۔سابقہ انبیاء کی شریعتوں میں بھی روزے کی عبادت موجود تھی ۔ یہودی ،عیسائی،ہندو اور سکھ سب ہی اپنے اپنے انداز سے روزے رکھتے ہیں۔
روزے اور ایمان کا تعلق بہت گہرا ہے ۔باقی تمام عبادات کسی نہ کسی حوالے سے دوسرے انسانوں کے علم میں آجاتی ہیں،نماز ایسی عبادت ہے جو چھپائے نہیں چھپتی ،حکم ہے کہ رکوع کرو ،رکوع کرنے والوں کے ساتھ ،یعنی اللہ کے آگے رکوع و سجود مل کر کرو،باجماعت نماز کو انفرادی نماز سے 27گنا افضل قراردیا گیا ہے ۔اسی طرح حج اورقربانی بھی ایسی عبادت ہے جو لاکھوں مسلمان مل کر کرتے ہیں،زکواۃ کا معاملہ بھی یہ ہے کہ اور کسی کو نہ بھی پتہ چلے جس کو دی جارہی ہے وہ تو جانتا ہے ۔لیکن روزہ ایک ایسی عبادت ہے جس کے متعلق روزہ دار جانتا ہے یا اللہ تعالیٰ جانتا ہے جو علیم بذات الصدور ہے ۔روزہ اسلام کا چوتھا ستون ہے اور یہ ہر عاقل و بالغ مسلمان مردو عورت پر فرض ہے بشرطیکہ کوئی شرعی عذر رکاوٹ نہ ہو۔اللہ تعالیٰ نے روزہ انسان پر تزکیۂ نفس اور تقوٰی و طہارت حاصل کرنے کے لیے فرض کیا ہے ۔ ہمارا فرض ہے کہ اس کے جملہ مقاصد اور تقاضوں کو سامنے رکھ کرروزہ رکھیں۔
روزہ ایمان کو ایک ننھی سی کونپل سے برگ و بار لانے والے شجر سایہ دار میں تبدیل کردیتا ہے ۔ایمان کی چنگاری کو شعلہ بنا دیتا ہے ۔ایک بندہ مومن اپنے رب کے حکم سے اس کی حلال کردہ چیزوں سے بھی اپنے آپ کو روک لیتا ہے ،اسے یقین محکم ہوجاتا ہے کہ اس کا خالق و مالک ہر لمحہ اسے دیکھ رہا ہے ۔وہ شدید پیاس میں بھی پانی ایک قطرہ اپنے خشک حلق سے نیچے لے جانے کا سوچ بھی نہیں سکتا۔سخت بھوک میں بھی روٹی کا ایک ٹکڑا اپنے پیٹ میں نہیں ڈالتا ۔اس کے اردگرد ہر چیز موجود ہوتی ہے ،فروٹ کی ریڑھیاں اسی طرح سجی ہوتی ہیں،ٹھنڈے اور میٹھے شربت ہیں مگر وہ ان تمام چیزوں سے اس لئے بچتا ہے کہ اس کے مالک کا حکم ہے کہ ان کے قریب جائو گے تو میرے ساتھ تم نے روزے کی شکل میں جو عہد باندھا ہے وہ ٹوٹ جائے گا ۔اللہ کا وہ بندہ جوسارا دن اللہ کے حکم پر اس کی حلال کردہ چیزوں ،جنہیں وہ سارا سال بغیر کسی روک ٹوک کے کھاتا پیتا رہا ہے ،ان کا کھانا پینا ترک کردیتا ہے وہ اللہ کی حرام کردہ چیزوں کے قریب کیسے جاسکتا ہے ۔یہی روزے کا مقصد اور تقویٰ کا معیار ہے ۔
روزے کا ایک اہم ترین مقصد معاشرے میں موجود غربا و مساکین اور نادار وں کی بھوک پیاس اور ضروریات کا احساس دلانا بھی ہے جو سارا سال غربت اور تنگ دستی کی وجہ سے بھوک برداشت کرتے ہیں۔بیوائوں اور یتیموں کی کفا لت کی طرف توجہ دلانا ہے جن کی بے چارگی انہیں ہروقت مجبور و محروم رکھتی ہے ۔اسی لئے فرمایا کہ کسی کا روزہ افطار کروانے والے کو ایک روزے کے مطابق اجر وثواب ملے گاخواہ وہ ایک کھجور اور پانی کے گھونٹ سے ہی کیوں نہ افطار کروایا جائے اور افطار کرنے والے کے اجرو ثواب میں بھی کوئی کمی نہیں ہوگی ۔اس لئے اپنے ارد گرد ایسے افراد کی طرف خصوصی توجہ دینے کی ضرورت ہے جوروزے تو رکھتے ہیں مگر انہیں سارادن یہ فکررہتی ہے کہ آج پکائیں گے کیا اور کھائیں گے کیا ۔؟ ان کے معصوم بچے بھی چاہتے ہیں کہ افطاری کے وقت ان کی کوئی پسندیدہ چیز کھانے کو مل جائے ۔اللہ تعالیٰ فرماتا ہے کہ جو بھوکے کو کھانا کھلانے کی ترغیب نہیں دلاتا اور یتیم کو دھکے دیتا ہے وہ دین کو جھٹلاتا اور قیامت کے دن کا انکار کرتا ہے ۔اسی حضور ﷺ نے فرمایا کہ وہ مسلمان نہیں ہوسکتا جو خود تو پیٹ بھر کرکھائے اور اس کا ہمسایہ بھوکا رہے ۔ صلحائے امت نے دائیں بائیں اور آگے پیچھے کے چالیس گھروں کو ہمسایہ قرار دیا ہے ۔اگر ہر فرد اپنے اردگرد کے ضرورت مندوں اورحاجت مندوں کی خبر گیری اور حاجت روائی کرے تو ہمارا معاشرہ محبت و اخوت اور ہمدردی و بھائی چارے اپنی مثال آپ بن سکتا ہے ۔
اللہ تعالیٰ نے رمضان المبار ک میں اسلام اور مسلمانوں ہمیشہ فتح و نصرت اور عزت و وقار سے سرفراز فرمایا ہے ،غزوہ بدر جسے یوم الفرقان بھی کہا گیا ہے وہ 17رمضان المبارک کو ہوا اور اللہ تعالیٰ نے کفر کے غرور کو ہمیشہ کیلئے خاک میں ملادیا۔فتح مکہ رمضان المبارک آٹھ ہجری میں ہوئی اور بیت اللہ ہمیشہ کیلئے مسلمانوں کے قبضہ میں آگیا ۔ 10رمضان المبارک کو محمد بن قاسم ؒ کے ہاتھوں سندھ فتح ہوا اور برصغیر میں اسلام کا پرچم لہرایا۔ برصغیر کے مسلمانوں کو اللہ تعالیٰ نے پاکستان کی نعمت 27رمضان المبارک کو عطا کی ۔اسی طرح اسلام کی تاریخ کو پڑھا جائے تو معلوم ہوتا ہے کہ اسلام اور مسلمانوں کی سربلندی کے اکثر واقعات رمضان المبارک میں پیش آئے ۔
حکومت اپنے تین سالہ دور میں مہنگائی پر قابو پانے میں بری طرح ناکام ہوچکی ہے ۔ان اڑھائی تین سالوں میں ہر چیز کی قیمتوں میں کئی کئی گنا اضافہ ہوچکا ہے ۔گزشتہ سال آنے والے آٹے اور چینی کے بحران پر اب تک قابو نہیں پایا جاسکا اور چینی مافیا نے مارکیٹ سے چینی غائب کردی ہے ۔پھل اور سبزیاں توعام آدمی کی پہنچ سے باہر ہوچکی ہیں۔اب تو غریب دال روٹی بھی نہیں کھا سکتا کیونکہ دالیں بھی گوشت کی قیمت میں مل رہی ہیں۔حکومت عوام کی آنکھوں میں دھول جھونکنے کیلئے سستے بازار بھی لگاتی ہے جہاں کئی کئی دنوںکی باسی سبزیاں اورخراب اور گلے سڑے پھل بھی منہ مانگے داموں بک جاتے ہیں ۔ حکومتی کارندے دکانداروں سے اپنا کمیشن لیکر غائب ہوجاتے اور دکانداروں کو عوام کی جیب پر ڈاکہ ڈالنے کی کھلی چھوٹ دے دی جاتی ہے ۔مہنگائی نے غریب کیلئے روزے جیسی عبادت بھی مشکل بنادی ہے ۔
حکومت اگر واقعی رمضان المبارک میں غریبوں کو ریلیف دینا چاہتی ہے تو اسے فوری طور پر آٹا ،چینی ،گھی اور دالیں خود خرید کر غریب بستیوں ،دیہاتوں ،گوٹھوں اور شہروں کے پسماندوں علاقوں میں عوام کو سستے داموں فروخت کرنی چاہئیں ۔ہر سال حکومت کی طرف سے اربوں روپے کی سبسڈی کے اعلانات ہوتے ہیں ،وہ اربوں روپے قومی خزانے سے نکل جاتے ہیں مگر کہاں جاتے ہیںکسی کو معلوم نہیں ہوتا ،غریب اسی طرح مہنگی چیزیں خریدنے پر مجبور ہوتے ہیں۔ دودھ کی قیمتوں میں کمی بہت ضروری ہے ۔اسی طرح سبزیوں اور پھلوں کی قیمتوں کوکنٹرول کرنے کی ضرورت ہے ۔رمضان جو اللہ سے ڈرنے اور اس کا تقویٰ اختیار کرنے کا درس دیتا ہے ،ذخیرہ اندوزوں اور ناجائز منافع خور وں نے اس ماہ مبارک کو لوٹ کھسوٹ کا مہینہ بنا لیا ہے ۔حکومت اگر چند شہروں سے بڑے بڑے ذخیرہ اندوزوں ، نامی گرامی منافع خوروں اور عوام کا خون نچوڑنے والوں کو پکڑ کر حوالاتوں میں بند کردے تو چند دن کے اندر مہنگائی پر قابو پایاجاسکتا ہے ۔

٭…٭…٭

About the author

Siraj ul Haq

Siraj ul Haq

Leave a Comment

%d bloggers like this: