2Below header

کربلا کے مسافر از ایم سرور صدیقی ( جمہورکی آواز )

M Sarwar Siddiqui
ایم سرور صدیقی ( جمہور کی آواز )
4Above single post content

سوچتاتواکثرتھامگراب کی بار یہ احساس شدت اختیارکرگیاتو ضبط کے سارے بندھن ٹوٹ گئے دل مضطرب اور روح بے چین ہوگئی آنکھیں جیسے ساون بھادوں بن گئیں سینے سے ایک ہوک سی اٹھنے لگی کہ کاش میں بھی اس زمانے میں ہوتا تو کتنا اچھا ہوتا اے کاش میں بھی دیارکربلا کا مسافرہوتا اس دشت کی آبلہ پائی مقدرہوتی تو میرا مقدرجاگ اٹھتا اگر ایسا ہوتا کہ میں قافلہ ٔ حسینؓ کے تقش ِ پاپر چلتا چلتا کربل کے تپتے صحرا میں پہنچتا دیوانہ وار نعرہ ٔ حق بلندکرتے ہوئے یزیدی لشکرسے ٹکراجاتا جسم کی تکہ بوٹی بھی ہوجاتا تو کوئی ملال نہ ہوتا یاپھر ننھے علی اصغرؓکی طرف آتا تیر میرے حلق میں پیوست ہوجاتاتو کتنا بہتر تھا یاپھر عباس ؓعلمدار کے بازو قلم ہونے سے پہلے میں تیزی سے آگے بڑھتا اور میرے بازو قلم ہوجاتے تو کتنی بڑی سعادت مجھے حاصل ہوجاتی انسان کی زندگی میں کتنے ارمان کتنی خواہشیں ایسی ہوتی ہیں جو دل ہی دل میں دم توڑجاتی ہیں کوئی نہیں جانتا کچھ خواہشیں رسواکردیتی ہیں اور کچھ پرزندگی نچھاورکرنے کوجی کرتاہے قافلہ ٔ حسینؓ کے مسافروں پر تو خوش بختی نازاںہے یقینا حسینؓ کے راستے میں قدم قدم پر منزل تھی لیکن ان کی منزل ِ مقصود سچائی تھی آپ تاریخ اٹھاکر دیکھ لیں جس نے بھی سچ کا ساتھ دیاتاقیامت زندہ و جاویدہوگیا ، ہمیشہ کے لئے امرہوگیا۔ جب خلافت کو ملوکیت نے بادشاہت میں تبدیل کردیا تو چندبڑے بڑے جلیل القدرصحابہ کرام نے اس کے خلاف مزاحمت کی ،کچھ نے حالات کی نزاکت کے پیش ِ نظرچپ سادھ لی،کچھ مصلحتوںکاشکارہوگئے کئی نے معاملات کو حالات کے رحم وکرم پرچھوڑدیابہرحال اکثریت نے ملوکیت کو دل سے قبول نہ کیا اسلامی سلطنت میں بھی نظریہ ضرورت ایجادکرلیا گیااس وقت چندصحابہ کرام اجمعین کا مؤقف یہ بھی تھا کہ حضرت امام حسینؓ کی خلافت سے دستبرداری نے دوسرے فریق کیلئے میدان کھلاچھوڑدیاہے بہرحال یزید نے حکومت سنبھالتے ہی جب فوراً اپنی خلافت کا اعلان کر دیا تو اس نے حضرت امام حسینؓ سے بھی اپنے ہاتھ پر بیعت کرنے کا مطالبہ کردیا کیونکہ یزیدکے حامیوںکاخیال یہ تھا کہ نواسہ ٔ رسول ﷺکی بیعت کے بغیرحکومت مضبوط نہیں ہوسکتی کل یہ نہ ہو کہ حضرت امام حسینؓ کے ساتھیوں نے یزیدکی حکمرانی کے خلاف علم ِ بغاوت بلندکر دیا تو پھر اس پرقابو پانا مشکل ہوجائے گالیکن حضرت امام حسینؓ نے کسی مصلحت اور نتائج کی پرواہ کئے بغیر بانگ ِ دہل اعلان کردیا کہ یزید خلافت کا اہل نہیں اس لئے اسے خلیفۃ المسلمین نہیں بنایا جاسکتا جس پر حکومتی ایوانوںمیں کھلبلی مچ گئی یزیدکے حامیوں نے مشورہ دیا کہ حضرت امام حسین ؓ سے ہرقیمت پر بیعت لی جائے چنانچہ یزیدکی طرف سے والی ٔ مدینہ ولید بن عتبہ کو خط پہنچا کہ وہ حضرت امام حسینؓ کو بیعت کیلئے اتنا مجبور کیا جائے کہ وہ راضی ہو جائیں اور ان کو اس معاملہ میں ہرگزکسی قسم کی مہلت نہ دی جائے۔حکمران اپنی بات منوانے کے لئے دھونس،لالچ یا ریاستی جبرکا سہارا لیتے ہیں اس لئے خوف و ہراس کی فضا پیداکردی گئی اس کے باوجود ولید بن عتبہ کے پاس جب یزید کا خط پہنچا تو وہ پریشان ہوگیا کہ اس حکم کی تعمیل وہ کس طرح کرے؟ کافی سوچ بچار کے بعد اس نے سابق والی مدینہ مروان بن حکم کو مشورہ کے لئے بلالیا، اس نے کہا کہ اگر امام حسینؓ یزید کے ہاتھ پر بیعت کرلیں تو ٹھیک ہے ، ورنہ ان پر سختی کی جائے انہیں شہید کرنابھی پڑے تو دریغ نہ کریں لیکن ولید مزاجا ً ایک عافیت پسند اور صلح جو شخص تھا، اْس نے مروان کی بات کی پرواہ کئے بغیر امام حسینؓ کے لئے راستہ کھول دیا یہ دیکھ کر مروان نے ولید کو انتہائی ملامت کی کہ تو نے بہترین موقعہ ضائع کردیا مخالف کو راستے سے ہٹایا جاسکتا تھا مگرولید بن عتبہ نے کہا کہ: ’’ اللہ کی قسم ! میں ایسا نہیں کرسکتا میں امام حسینؓ کو شہید کرنے سے ڈرتا ہوں میرادل گواہی دیتاہے آپ کا خون جس کی گردن پر ہوگا وہ قیامت کے دن نجات نہیں پا سکے گا۔‘‘ اسی دوران حضرت امام حسینؓ اپنے اہل و عیال کو لے کر مکہ مکرمہ تشریف لے گئے۔ اہل کوفہ کو جب حالات کا علم ہوا کہ امام حسینؓ نے یزید کی بیعت سے انکار کر دیا ہے تو درجنوں افراد حضرات سلیمان بن صرد خزاعی کے مکان پر جمع ہوئے وہ انتہائی پرجوش تھے انہوں نے صلاح مشورہ شروع کردیا شرکاء کی اکثریت چاہتی تھی کہ حضرت امام حسینؓ کا ساتھ دیا جائے فیصلہ یہ ہوا کہ حضرت امام حسینؓ کو خط لکھاجائے کہ ہم بھی یزیدکی بیعت نہیں کرنا چاہتے آپ ؓ فوراً کوفہ تشریف لے آئیں ہم سب آپ کے ہاتھ پر بیعت کرلیںگے۔ اسی اثناء میں کوفہ ہی سے ا سی مضمون پر مشتمل کچھ اور خطوط امام عالی مقام حسینؓ کو موصول ہوئے، جن میں یزید کی شکایات اور اس کے خلاف اپنی نصرت و تعاون اور آپ کے دست ِ حق پر بیعت کرنے کا یقین دلایا گیا تھا۔ حضرت علیؓ کے دور ِ خلافت میں کوفہ ان کا دارالحکومت رہ چکا تھا وہاں اہل ِ بیت سے محبت کے دعوے داروںکی بڑی تعداد موجود تھی۔ حضرت امام حسینؓ کو ان کے چندساتھیوںنے مشورہ دیا کہ کوفہ کے لوگ ہمارا ساتھ دیں تویزید کے خلاف موومنٹ چلائی جاسکتی ہے حضرت امام حسینؓ نے اپنے چچا زاد بھائی مسلم بن عقیلؓ کو کوفہ روانہ کیا اور ان کے ہاتھ یہ خط لکھ کر اہل کوفہ کی طرف بھیجا کہ :’’میں اپنی جگہ اپنے چچا زاد بھائی مسلم بن عقیلؓ کو بھیج رہا ہوں تاکہ یہ وہاں کے حالات کا جائزہ لے کر مجھے ان کی اطلاع دیں۔ اگر حالات موافق ہوئے تو میں قافلہ لے کر فوراً کوفہ پہنچ جائوںگا۔‘‘ جب حضرت مسلم بن عقیل ؓ کوفہ پہنچے تو لوگوںنے ان کا والہانہ استقبال کیا انہوں نے جب چند دن کوفہ میں گزارے تو انہیں اندازہ ہوا کہ یہاں کے لوگ واقعی یزید سے متنفر اور امام حسینؓکی بیعت کے لئے بے چین ہیں چند ہی دنوں میں اہل کوفہ سے 18000 مسلمانوں نے حضرت امام حسینؓ کے لئے بیعت کر لی جس پرحضرت مسلم بن عقیل ؓ نے حضرت امام حسینؓ کو کوفہ آنے کی دعوت دے دی۔ جب نواسہ ٔ رسول نے کوفہ جانے کا عزم کر لیا ہے تو حضرت عبد اللہ بن زبیرؓ نے اپنے شدید تحفظات کااظہارکرتے ہوئے کہا آپ وہاں نہ جائیں مجھے حالات بہترنظرنہیں آرہے کیونکہ میں آپ کو کسی خطرے میں نہیں دیکھ سکتا اس لئے آپ کوفہ ہرگز نہ جائیں لیکن امام حسینؓ کوفہ جانے کا مصمم ارادہ کرچکے تھے ۔ تاریخی اعتبار سے 8 یا 9ذی الحجہ06ھ کو مکہ مکرمہ سے کوفہ کے لئے روانہ ہوگئے۔ کوفہ میں جب ابن زیاد کو آپ کی آمد کی اطلاع ملی تو اْس نے چالاکی یہ کی کہ مقابلے کے لئے پیشگی ہی اپنا ایک سپاہی ’’قادسیہ‘‘ کی طرف روانہ کردیا۔ حضرت امام حسینؓ جب مقام’’ زیالہ‘‘ پر پہنچے انہیں یہ المناک خبر پہنچی کہ رضاعی اور چچا زادبھائی مسلم بن عقیل کو دونوں بیٹوں سمیت شہید کر دیا گیاہے یہ ظلم اسلئے کیا گیا کہ خوف وہراس اس قدرپیداکیاجائے کہ کوئی حضرت امام حسینؓ کا ساتھ نہ دے یزید اور اس کے ساتھی اس مقصدمیں کافی حد تک کامیاب رہے کیونکہ ایک بھی صحابی ٔ رسول قافلہ ٔ کربلا میں شامل نہ ہوااور حضرت امام حسینؓ نے اس کے باوجوداپنے راستے سے پیچھے ہٹنا گوارانہ کیا اور اپنے خاندان اور ساتھیوںسمیت کوفہ جانے کا فیصلہ کرلیاتو حکومتی ایوانوںمیں کھلبلی مچ گئی۔ اسی دوران حر بن یزید نے حضرت امام حسین سے رابطہ کیا آپ نے اس سے استفسارکیا تمہارا کیا ارادہ ہے؟‘‘ حر نے کہا ’’ہمارا ارادہ یہ ہے کہ ہم آپ ؓ کو ابن زیاد کے پاس پہنچا دیں۔ تاکہ کوئی بہترصورت ِ حال نکل آئے ‘‘ حضرت امام حسین ؓ نے اس کے عزائم کو بھانپتے ہوئے فرمایا ’’میں تمہارے ساتھ ہرگز نہیں جا سکتا۔‘‘ حر نے کہا: ’’اللہ کی قسم ! پھر ہم بھی آپ کو یہاں تنہا نہ چھوڑ سکتے ابھی یہ بات چیت ہورہی تھی کہ 1000 مسلح گھڑ سواروں کی فوج حر بن یزید کی قیادت میں مقابلہ پر آگئی اور پڑائو ڈال دیا۔ حر بن یزید کو حصین بن نمیر نے ایک ہزار گھڑ سواروں کی فوج دے کر ’’قادسیہ‘‘ بھیجا تھا، اس لئے یہ اور اِس کا لشکر آ کر امام حسینؓ کے مقابل آ گئے۔

5Below single post content
Avatar

M Sarwar Siddiqui

M Sarwar Siddiqui

View all posts

Add comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

%d bloggers like this: