2Below header

علاقائی صحافیوں کی تحریکی جدوجہدکا ایک اور پڑائو ازعابد حسین مغل ( نقارہ حق )

4Above single post content

شعبہ صحافت نے پچھلے 20سال میںایک صدی کا سفرطے کیا ہے، کوئی جو بھی کہے لیکن پاکستان میں آزاد میڈیا ایک آمر کی حکومت کے بعد ملا ہے، شعبہ صحافت نے ہمیشہ اپنا ذمہ دارانہ کردار ادا کیا، قیام پاکستان کے لیے بھی اس وقت کے اخبارات نے اہم کردار ادا کیا تھا ،میڈیا پر یہ بھی الزام کسی حد تک درست تھا کہ میڈیا ہی حکومت بناتا ہے اور میڈیا ہی گراتا ہے، اچھائی اور برائی ہر جگہ ہی ہوتی ہے لیکن عام آدمی کو انصاف مل رہا ہے تو اس کے پیچھے بھی میڈیا ہی ہے۔ 11اکتوبر2011؁ء کو بلدیہ ہال اوکاڑہ میں اہل قلم کنونشن کے نام سے صحافیوں کا ایک بڑا پروگرام انعقاد پزیر ہوا، جس میں فیصل آباد ،ٹوبہ ٹیک سنگھ ،پاکپتن ،وہاڑی ،قصور ،لاہور ،ساہیوال سمیت مختلف اضلاع سے علاقائی صحافیوں کو شرکت کی دعوت دی گئی جس کے بعد ضلع ٹوبہ ٹیک سنگھ کی تحصیل کمالیہ سے تعلق رکھنے والے رائے سجادخاں کھرل(مرحوم)اور اوکاڑہ کی تحصیل دیپالپورکے تاریخی قصبہ حجرہ شاہ مقیم سے تعلق رکھنے والے سینئر صحافی مرزا ارشد فریدی مرحوم سے مشاورت کے بعد صوبائی سطح پر علاقائی صحافیوں کی حالت زار کو بہتر بنانے کے لیے تنظیم بنانے کا منصوبہ بنایا گیا جس کے لیے راقم ساہیوال پریس کلب کے صدر سید شفقت حسین گیلانی سے ملا اور دوستوں کی مشاورت سے آگاہ کیا صوبائی سطح کی تنظیم سازی کے لیے مختلف اضلاع سے ہم خیال صحافیوں کو دعوت دینے پر غور کیا اور چیچہ وطنی سے تعلق رکھنے والے چوہدر ی عبدالرزاق کی میزبانی میں 40شہروں کے صحافیوں کا اجلاس چیچہ وطنی پریس کلب میں منعقد ہواجس کی صدارت سید شفقت حسین گیلانی نے کی ،اجلاس کو کامیاب بنانے کے لیے رائے سجاد حسین کھرل (مرحوم)،مرزا محمدارشد فریدی (مرحوم )اور راقم نے کئی روز تک محنت کی اجلاس زبردست حد تک کامیاب رہا اجلاس میں پنجاب کے مختلف اضلاع سے آئے ہوئے صحافیوں نے فیصلہ کیا کہ 11افراد پر مشتمل ایک کمیٹی بنائی جائے جو تنظیم کے منشور ،نام اور اس کے عہدیداران کا اعلان کرے گی ۔10جون 2012؁ء کو سید شفقت حسین گیلانی کی رہائش گاہ ساہیوال میں کمیٹی کے ارکان کا اجلاس ہو ا،کمیٹی نے مختلف ناموں پر غور اور علاقائی صحافیوں کے مسائل کو دیکھتے ہوئے 10سال سے فیصل آباد ڈویژن میں صحافیوں کے حقوق کی جدوجہد کرنے والی تنظیم ریجنل یونین آف جرنلسٹس کو پو رے صوبے میں منظم کرنے کا اعلان کرتے ہوئے اس کی سربراہی قائد صحافت سید شفقت حسین گیلانی کودیتے ہوئے عہدیداران کا اعلان بھی کر دیا پورے صوبے میں تنظیم سازی کے لیے رابطے کیے گئے اور راقم بطور جنرل سیکرٹری پنجاب نامزد ہوا۔اٹک سے رحیم یار خان تک شہر شہر وزٹ کیا، پہلا یوم تاسیس جھنگ ،دوسرا ساہیوال ،تیسرا لاہور ،چوتھا بہاولپور میں اسلامیہ یونیورسٹی کے سیمینارہال میں منعقد ہوا جس میں قیادت سے مشاورت کے بعد تنظیم کا دائرہ کار پورے ملک میں بڑھانے کا اعلا ن کر دیا، تنظیم کے مرکزی صدر سید شفقت حسین گیلانی اور سیکرٹری جنرل رائے سجاد حسین کھرل (مرحوم )کو نامزد کیا گیا جس کے بعد سندھ ،کے پی کے ،بلوچستان ،آزاد کشمیر اور جی بی میں تنظیم سازی کی گئی، جولائی2018؁ء میں مرکزی سیکرٹری جنرل رائے سجاد حسین خاںکھرل دنیا فانی کو چھوڑ گئے ان کی موت ریجنل یونین آف جرنلسٹس پاکستان کے لیے بڑا دھچکا تھااس سے قبل ستمبر 2015؁ء میں مرزا محمد ارشد فرید ی (مرحوم )کی موت کا خلاء ابھی پورا نہیں ہوا تھا اس کے بعد مرکزی صدر قائد صحافت سید شفقت حسین گیلانی نے سینٹرل ایگزیکٹو کمیٹی کا اعلان کیا جس کے ممبران ملک بھر سے لیے گئے ، تنظیم کی سینٹرل ایگزیکٹو کمیٹی نے جنوری 2020؁ء کو لاہور میں ہونے والے اجلاس میں راقم کو بطور سیکرٹری جنرل نامزد کیا جس کے بعد دوبارہ تنظیم کو منظم کرنے کے لیے کام شروع کیا اوکاڑہ اور مظفر گڑھ میں کنونشن منعقد کیے گئے تو کرونا وائرس کی وجہ سے تنظیمی سرگرمیاں روکنا پڑیں، جس کے بعد سینٹرل ایگزیکٹو کمیٹی کے اجلا س میں علاقائی صحافیوں کے مطالبات پر مشتمل 7نکاتی چارٹر آف ڈیمانڈ پیش کیا گیا، حکومت کی طرف سے روایتی بے حسی کے بعد دوبار ہ اجلاس بلایا گیا جس میں پاکستان کی تاریخ میں پہلی بار چھوٹے شہروں سے تعلق رکھنے والے صحافیوں کے بنیادی حقوق کے حصول کی عملی جدوجہد کا آغاز کیا گیا ہے جس میںپہلے مرحلے میں 10اضلاع میں احتجاجی ریلی اور دھرنا دیا جارہا ہے۔
میں یونہی نہیں دست و گریباں زمانے سے
میں جس جگہ پہ کھڑا ہوں کسی دلیل سے ہوں

5Below single post content
Peerzada M Mohin

Peerzada M Mohin

M Shahbaz Aziz is ...

View all posts

Add comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

%d bloggers like this: