Maulana Muhammad Ilyas Ghuman Today's Columns

سود کی حرمت اور نقصانات از مولانا محمد الیاس گھمن

Maulana Muhammad Ilyas Ghuman

تمام شریعتوں میں حرام، اللہ تعالیٰ سے اعلان جنگ،معیشت کے لیے زہر قاتل
ماں سے زنا کرنے سے بڑاگناہ،رحمت خداوندی سے دوری کا ذریعہ، جہنم کے عذاب کا سبب
متکلم اسلام مولانا محمد الیاس گھمن
اللہ تعالیٰ نے سود کو حرام قرار دیا ہے۔آپ خود سوچئے کہ جب ایک چیز کو اللہ تعالیٰ جیسی حکیم و خبیر ذات خود حرام قرار دے رہی ہو تو اس میں کس قدر نقصانات ہوں گے؟ سود کبیرہ گناہوں میں سے ایک ہے۔اللہ کی ناراضگی کا سبب ہے بلکہ اللہ اور اس کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم سے اعلان جنگ ہے۔ سود کھانا اپنی ماں سے زنا کرنے سے بھی بڑا گناہ ہے۔ اللہ کے عذاب کا سبب ہے۔ انسان کے جہنم میں جانے کا باعث ہے۔ اللہ کی رحمت سے دوری کا ذریعہ ہے۔ انسانوں کے حق میں مفید معیشت کیلیے زہر قاتل ہے۔ سود کی قرآن وسنت میں بہت سخت قباحتیں اور وعیدیں مذکور ہیں۔
سود سابقہ شریعتوں میں :
یہودیوں کے بارے قرآن کریم میں ہے:اور یہودیوں کے سود لینے کی وجہ سے(عذاب آیا)حالانکہ انہیں اس سے روکا گیا تھا۔ (سورۃ النساء، رقم الآیۃ: 161)
فائدہ: اس آیت کے تحت مفسرین کرام نے لکھا ہے کہ شریعت محمدیہ کی طرح سود سابقہ شریعتوں میں بھی حرام تھا۔
سود حرام ہے:
مفہوم آیت: سود کھانے والے لوگ جب قیامت والے دن قبروں سے اٹھیں گے تو اس شخص کی طرح اٹھیں گے جسے شیطان نے چھو کرپاگل بنا دیا ہو یہ(عذاب )اس لیے ہوگا کہ دنیا میں یہ لوگ کہا کرتے تھے کہ بیع بھی تو سود کی طرح ہوتی ہے حالانکہ اللہ تعالیٰ نے بیع کو حلال جبکہ سود کو حرام قرار دیا ہے۔ لہذا جس شخص کے پاس اس کے رب کی طرف سے نصیحت(سود کی واضح حرمت )آگئی ہواور وہ اس کی وجہ سے سودی معاملات سے آئندہ کے لیے باز آ گیا تو گزشتہ زمانے میں جو کچھ سودی معاملہ ہو چکا،سو وہ ہو چکا۔ اس کا معاملہ اللہ کے حوالے ہے۔ اور جو شخص دوبارہ سود والے حرام کام کی طرف لوٹا وہ جہنمی ہے وہ ہمیشہ اسی میں رہے گا۔(سورۃ البقرۃ،رقم الآیۃ:275)
فائدہ: ہمارا عقیدہ اور نظریہ یہ ہے کفر و شرک کے علاوہ کبیرہ گناہ کرنے والا ہمیشہ جہنم میں نہیں رہے گا بلکہ اپنے گناہوں کی سزا پا لینے کے بعد بالآخر جہنم سے نکال لیا جائے گا۔ مذکورہ بالا آیت کریمہ سے بظاہر یوں لگتا ہے کہ سود کھانے والا ہمیشہ جہنم میں رہے گا حالانکہ ایسا نہیں۔ آیت مبارکہ میں جس شخص کا ذکر ہے وہ وہ شخص ہے جوسرے سے سود کی حرمت کا قائل نہیں ہے بلکہ کہتا ہے کہ سود بھی تو بیع کی طرح ہے ایسا شخص سود کو حرام نہ ماننے کی وجہ سے کافر ہے اور کافر ہمیشہ جہنم میں رہیں گے۔
سود کو اللہ تعالیٰ گھٹاتے ہیں:
مفہوم آیت: اللہ تعالیٰ سود کے مال کو گھٹاتے ہیں اور صدقہ کے مال کو بڑھاتے ہیں۔(سورۃ البقرۃ، رقم الآیۃ: 276 )
حضرت عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: سود اگرچہ دیکھنے کے اعتبار سے زیادہ ہی دکھائی دے لیکن انجام کے اعتبار سے کم ہی ہوتا ہے۔(مسند احمد، رقم الحدیث:3754)
سودی معاملات فی الفور چھوڑ دیے جائیں:
مفہوم آیت: اے ایمان والو!اگر تم واقعی پکے سچے مومن ہو تو اللہ سے ڈرو اور سود کے سابقہ معاملات چھوڑ دو۔(سورۃ البقرۃ، رقم الآیۃ: 278)
حجۃ الوداع پر اعلان:
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے حجۃ الوداع کے موقع پر ہوئے فرمایا:تمام لوگ اس بات کو اچھی طرح ذہن نشین کر لو کہ زمانہ جاہلیت کا ہرقسم کا سود ختم ہوچکا ہے لہٰذا تمہارے لیے اب تمہارا اصل مال(باقی)ہے نہ تم خود کسی پر ظلم کرو اور نہ ہی کسی اور کے ظلم کا شکار بنو۔عباس بن عبدالمطلب کا سود سارے کا سارا ختم ہے۔(جامع الترمذی، رقم الحدیث:3087)
فائدہ: سود کی حرمت آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی زندگی آخری سالوں میں ہوئی اس لیے حجۃ الوداع کے موقع پر تمام لوگوں کے سامنے اس کی حرمت کو عملی شکل دی گئی ۔
سود خور سے اللہ کا اعلان جنگ:
مفہوم آیت: پھر اگر تم نے ایسا نہ کیایعنی سودی معاملات کو نہ چھوڑاتو اللہ اور اس کے رسول کی طرف سے تمہارے خلاف اعلان جنگ ہے اور اگر تم توبہ کر لوسودی معاملات کو یکسر چھوڑ دوتو تمہارا اصل سرمایہ تمہارا حق ہے وہ تم لے لو۔ نہ تم کسی پر ظلم کرو نہ تم پر کوئی اور ظلم کرے۔(سورۃ البقرۃ، رقم الآیۃ:279)
فائدہ: قرآن و سنت سے معلوم ہوتا ہے کہ دیگر کبیرہ گناہوں کی سزا میں اس قدر شدت بیان نہیں کی گئی جتنی سود کی سزا میں بیان کی گئی ہے۔ یعنی اللہ اور اس کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم کی طرف سے اعلان جنگ۔ جب اللہ کی طرف سے اعلان جنگ ہو تو خود سوچئے کہ بندے کا کیا بچے گا؟ اللہ کریم ہم سب کی حفاظت فرمائے۔
سودی معاملات سے متعلقہ تمام افراد پر لعنت:
حضرت جابر بن عبداللہ رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم نے سودکھانے، سود دینے، سودی حسابات ومعاملات لکھنے اور سودی لین دین پر گواہ بننے والوں پر لعنت فرمائی ہے اور فرمایا ہے کہ یہ تمام لوگ گناہ گار ہونے میں برابر کے شریک ہیں۔(صحیح مسلم، رقم الحدیث:4100)
فائدہ: بے شک انسان خود سود نہ بھی لے لیکن اگر وہ سودی معاملات میں کسی درجے بھی شریک ہوتا ہے تو اس کو بھی ایسا ہی عذاب دیا جائے گا جیسا سود لینے اور دینے والے کوہوگا۔ اس لیے تمام سودی معاملات سے خود کو دور رکھیں۔ورنہ انسان ان تمام وعیدوں اور عذابوں کا مستحق بن جاتا ہے جو قرآن و سنت میں مذکور ہیں۔
ماں سے زنا کرنے سے بھی بڑا گناہ:
حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: سود کے اندر ستر قسم کے گناہ پائے جاتے ہیں اور ان میں سے سب سے کم درجے کا گناہ ایسا ہے جیسے کوئی شخص اپنی ماں سے زنا کرے۔(سنن ابن ماجہ، رقم الحدیث :2274)
عذاب کی مستحق قوم:
حضرت عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: جب کسی قوم میں زنا اور سود پھیل جائے تووہ قوم اپنے آپ کو اللہ کے عذاب کی مستحق بنا لیتی ہے۔(صحیح ابن حبان، رقم الحدیث :4410)
فائدہ: اس وقت پورے عالَم پر جو عذاب ہے اس میں مسلمانوں کے کبیرہ گناہوں کو بھی دخل ہے۔ اس لیے ہم سب کو تمام گناہوں سے سچی توبہ کرنا ہوگی۔
غیر سودی بینکاری:
دور حاضر میں جید علماء کرام کی محنت سے ایک غیر سودی بینکاری کا نظام پیش کیا گیا ہے۔اس لیے سودی معاملات سے بچنے کے لیے اپنا سرمایہ غیر سودی بینکوں میں جمع کرائیں، تجارت کریں، نفع کمائیں۔
ارادہ نہیں فیصلہ کریں:
خود بھی اور اپنی اولادوں کوبھی حرام کے لقمے سے بچائیں۔ اسلام تو شبہ والی بات سے بھی بچنے کا حکم دیتا ہے اور سود تو واضح طور پر حرام ہے۔ لقمہ حرام کی نحوست سے انسان دنیا و آخرت کا خسارہ اٹھاتا ہے۔دنیا میں انسان پر بیماریوں کا حملہ ہونا، ذہنی اذیت میں مبتلا ہونا، اولاد کا نافرمان ہونا،گھریلو جھگڑوں کا بڑھ جانا اور حادثات کا پیش آنا سب شامل ہے جبکہ آخرت میں اللہ کی ناراضگی، شفاعت سے محرومی اور جہنم کی آگ کا مستحق ہونا شامل ہے۔ اس لیے محض ارادہ نہیں بلکہ فیصلہ کریں کہ نہ خود سود کھائیں گے اور نہ ہی کسی طرح کے سودی معاملات میں شریک ہوں گے اور اپنی اولادوں کو بھی اس سے بچائیں گے۔ اللہ تعالیٰ ہمیں رزق حلال پاکیزہ وسعت والا عطا فرمائے اور حرام سے ہماری حفاظت فرمائے۔ آمین بجاہ النبی الکریم صلی اللہ علیہ وسلم۔

٭…٭…٭

About the author

Maulana Muhammad Ilyas Ghuman

Maulana Muhammad Ilyas Ghuman

Leave a Comment

%d bloggers like this: